Naimatullah Khan

Naimatullah KhanNaimatullah Khan was the Mayor of Karachi from August 2001 to June 2005. Naimatullah Khan has been involved with Islami Jamiat-e-Talaba, and is a senior member of Jamaat-e-Islami Pakistan.

Early life

Naimatullah Khan was born in Ajmer, Rajasthan, British India on 1 October 1930 to Abdul Shakoor Khan,a railway postmaster and Bismillah Begum, a housewife. He was the third child of Abdul Shakoor Khan. He had two elder sisters and two younger brothers. In 1940, his father died of tuberculosis. The family then moved to Shahjahanpur, Uttar Pradesh, British India to live with their maternal relatives.

Migration

Conditions deteriorated in the South Asia in 1940s as the independence neared. In the meantime, Khan’s family moved back to Ajmer and Khan was now living with his paternal uncles. Khan briefly volunteered as a national guard for the Pakistan Muslim League rallies where he caught glimpses of national leaders like Qaid-e-Azam Muhammad Ali Jinnah and Liaqat Ali Khan. It was July 1947 and Khan’s departure to newly created Pakistan was eminent. One day during clashes with the Hindus, Khan and his friends made fire crackers filled in packs of cigarette and threw them at the opposition.
Police was in search of Khan and his friends and his uncle advised him to leave Ajmer for Karachi. Khan obeyed the orders and thus commenced the journey which would change his and his family’s life. He left Ajmer alone for Karachi sometime in July 1947. He took a train which took him directly to Karachi via the Rajhastan desert. The train line currently stands suspended. He had a stop at Hyderabad,Pakistan where he met his father’s friend who gave him 10 rupees. Khan’s train was one of the very last trains which completed their journey without any massacre. Naimatullah Khan spent his first night on a footpath on I.I.Chundrigar road in a place where currently the Cotton Exchange of Pakistan stands.

Early years of struggle 1947–58

Khan describes his life from 1947–1958 as that of struggle and hardships. A few days after coming to Karachi, Khan was given a small flat on Burns Road to live under the migrant claims system prevailing at that time. That lot of flats were occupied mostly by Hindus who immediately protested to a Muslim living in the flats and Khan was turned out by the authorities. Thus Khan had no option but to set up a Jhonpari (straw house) near a place where later the tomb of Qaid-e-Azam Muhammad Ali Jinnah was built. Khan started doing part-time jobs mostly that of a stenographer. He had learned shorthand back at Ajmer which helped him. In the meantime he went back to Ajmer and brought his younger brother with him to Karachi. Up until this point Khan was totally uninterested in studies.
 Naimatullah Khan2His mood changed while he was preparing for the exam of the prestigious Indian Civil Service. Although he didn’t qualify, this preparation inclined him towards pursuing higher studies. He had already done his matriculation back at Ajmer. Khan brought his other family members to Karachi in 1949–50 and they settled with him in the Jhonpari. Both his sisters were married from this Jhonpari. In the meantime Khan concentrated on his work and studies. He worked all day from six in the morning to ten at night doing several part-time jobs. He used to go standing in a truck to work in the morning reading his course book. Interestingly he never attended college or university.
He had the responsibility of feeding his whole family thus he never got time to attend any institution. He enrolled at the Punjab University and just sat his papers. The highlight of his part-time job career was him working as a stenographer for Jamshed Nusserwanjee Mehta. Mehta was the first ever mayor of Karachi. He took office in 1934 when Sindh was for the first time separated from the Bombay Presidency. He was currently working as Chairman of Sindh Purchasing Board when Khan worked as his stenographer. Naimatullah Khan later went on to become the mayor of Karachi himself. Khan completed his intermediate, BA, and a double MA in journalism and Persian. He also did his LLB. He then started working in the office of a lawyer. In the meantime Khan and his family become deeply saddened by the demise of Khan’s eldest sister who died at a very young age.
Khan recalls that he had gone to work and when he returned he was informed that his sister had died and was even buried. Lack of communication in those days meant Khan couldn’t be informed of the death. The lawyer whose office Khan worked at once asked Khan “Naimat, have you completed your studies?”. Khan replied yes. He told Khan to start his own work. This proved to be the turning point in Khan’s financial fortune. He up until then used to earn Rs 225 per month. He started his work in early 1958 as an income tax lawyer after taking out a 5000 rupee loan from a friend. He set up his office in Wazir Mansion I.I.Chundrigar Road. Conditions soon turned into his favour. Just months after he set up his work, martial law was imposed in Pakistan and Ayub Khan announced that whoever had not paid his income tax wont be prosecuted if he/she paid the tax up until a later date. This proved to be fruitful for Khan and many people poured into his office each day to file their tax returns thus providing Khan with loads of clients which meant a healthy income for him. Khan was finally out of poverty.

Entering politics

Khan was married in 1960. He built himself a proper house in 1967 in which he lived until 2011. Naimatullah Khan was always inspired by the writings and works of Maulana Maududi, the founder of Jamaat-e-Islami. His enternce into politics started as far back as late 1960s when he helped organise political programs at his own house. He formally joined the party in 1974 while at Hajj in Makkah. Khan worked diligently for the party slowing rising through the ranks. In 1977 Khan was jailed in Sukkur for holding a rally in Karachi at a time when public gatherings were not allowed due to orders by then Prime Minister Zulfiqar Ali Bhutto. Khan spent three months in jail. Khan recalls how he met the infamous General Niazi at the Sukkur jail. Martial law was imposed in 1977 and elections were held in 1979.
Khan was the top most contender to become the mayor of Karachi. Citing personal issues Khan refused to take the office. Khan at that time had nine kids most of whom were very young. Khan realised his children were too young for him to take such an important role. As his replacement Abdul Sattar Afghani was made the mayor who served in the capacity until 1987 after getting re-elected in 1983. Non political elections were held in 1985 and Khan won the PS-81 constituency from Karachi. He subsequently became the Leader of Opposition of the Sindh Assembly from 1985–88. President Zia-ul-Haq was killed in a plane crash in 1988 and all the prevailing assemblies were dissolved. Khan later became the Jamaat-e-Islami Ameer of Karachi in 1990. He served in this capacity until 2001 when he had to resign to take the office of the Mayor of Karachi. In the meantime Khan also retired from his law practice in 1991 after a 34-year career.

Mayor of Karachi

Martial Law was imposed on 12 October 1999. President Musharraf formulated the new system of CDGK (City District Government Karachi). Elections were held in 2001 and Jamaat-e-Islami was able to win 12 town nazim seats out of 20. Naimatullah Khan serving at that time as the party Ameer of Karachi was nominated as the contender for the Mayor of Karachi. Having already won the majority, he was elected as the first mayor of the newly formed local body system. During his tenure he oversaw the Taameer-e-Karachi program aimed at improving the infrastructure of Karachi. He achieved over the years of his tenure to increase the budget of Karachi from 6 billion rupees to 43 billion rupees. He passed various projects such as 18 flyovers, six underpasses, two signal free roads and a huge water supply scheme for the people of Karachi. It was the first time in the history of Karachi that all the stake holders were incorporated for the developmental works. He was also the person behind the project which built dozens of Model Town Parks in Karachi.

Personal life

Khan was married in 1960 to Tahira Khatoon. He has seven sons and two daughters. All are married. His wife died in 1994 after a protracted illness. His grand daughter born in 1995 from his second son Nadeem was named Tahira, in memory of his deceased wife. He had two sisters, both of whom have died; one of his brothers is also dead. His sons are Waseem, Nadeem, Faheem, Kaleem, Naeem, Asim, Nazim. His daughters are Gohar Lubna and Gohar Afshan. All the sons’ middle name is “Iqbal” after the late sister of Khan whose name was Iqbal. Khan also wrote a book called “Roshni ka safar” that talked about all the work he had done as mayor.

Charity work

After retiring from politics in 2005, Khan took the office of the President of Alkhidmat Foundation an NGO. He served in that capacity until 2011 when due to age and illness he just decided to look after the southern region of Alkhidmat Foundation. He has extensively worked in the Thar region of Pakistan since 1997 trying to bring that area out of problems such as acute water shortages and illiteracy.
Advertisements

ڈاکٹر روتھ فاؤ کے نام پر یادگاری سکوں کے اجرا کا فیصلہ

پاکستان میں لگ بھگ چھ دہائیوں تک جذام یعنی ’کوڑھ‘ کے مرض کے خاتمے کے لیے کام کرنے والی جرمن ڈاکٹر روتھ فاؤ کو خراجِ عقیدت پیش کرنے کے لیے وفاقی حکومت نے 50 روپے کے سکے جاری کرنے کی منظوری دی ہے۔ ڈاکٹر روتھ فاؤ رواں سال اگست میں کراچی میں 87 سال کی عمر میں انتقال کر گئی تھیں۔ وزیرِ اعظم شاہد خاقان عباسی کی زیرِ صدارت وفاقی کابینہ کے اجلاس میں ڈاکٹر روتھ فاؤ کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے 50 روپے کے 50 ہزار یادگاری سکے جاری کرنے کی منظوری دی گئی۔

جرمن ڈاکٹر روتھ فاؤ نے جذام سے متاثرہ مریضوں کے لیے اپنی زندگی وقف کر رکھی تھی اور اُنھوں نے اس مرض سے متاثر افراد کے علاج اور دیکھ بھال کے لیے ساٹھ سال قبل کراچی میں ’میری ایڈ لیڈ سوسائٹی‘ قائم کی تھی۔ اپنا آبائی ملک چھوڑ کر پاکستان کو اپنا مستقل مسکن بنانے اور یہاں زندگی بھر کوڑھ کے مریضوں کے علاج و دیکھ بھال پر اُنھیں ’’پاکستانی مدر ٹریسا‘‘ بھی کہا جاتا تھا۔
ڈاکٹر روتھ فاؤ کی خدمات کے اعتراف میں حکومتِ پاکستان نے انہیں ہلالِ امتیاز اور ستارۂ قائداعظم جیسے نمایاں سول ایوارڈز سے نوازا تھا۔ جب کہ اُن کی تدفین بھی سرکاری اعزاز کے ساتھ کراچی میں کی گئی تھی۔

محمد اشتیاق

کراچی میں اپنی نوعیت کے پہلے روٹی بینک کا آغاز

 ’روٹی بینک‘کے ایک عہدیدار حارث علی نے وائس آف امریکہ کو بتایا ’ اس بینک کے قیام کا مقصد سفید پوش لوگوں کی مدد کرنا ہے۔ شہر میں جگہ جگہ دسترخوان لگتے ہیں جہاں راہ گیر وں کو مفت کھانا کھلایا جاتا ہے لیکن کچھ ’وائٹ کالرز ‘سڑک کنارے بیٹھ کر کھانے میں شرم محسوس کرتے ہیں اور خیال کرتے ہیں کہ کسی جاننے والے سے دیکھ لیا تو کیا ہو گا. یہ ’روٹی بینک انہی وائٹ کالرز یا سفید پوش لوگوں کی مدد کے لئے کھولا گیا ہے۔ ‘‘

حارث نے وی او اے کے ایک سوال پر بتایا ’ کوئی بھی وائٹ کالر یا ضرورت مند شخص اپنا اور اپنی اہلیہ کا شناختی کارڈ اور بچوں کا برتھ سرٹیفکیٹ کی فوٹو کاپی ہمارے پاس جمع کرا کے دونوں وقت کا کھانا اپنے ساتھ لے جا سکتا ہے۔ ہر فیملی کی فائل ہم الگ رکھتے ہیں اور پوری راز داری برتے ہیں ۔ روٹی بینک کراچی کی ایک رفاعی تنظیم سیلانی ٹرسٹ نے شروع کیا ہے. ٹرسٹ کے منیجر زوہیب نے بتایا کہ ٹرسٹ نے بڑے پیمانے پر ایک کچن بنا رکھا ہے جہاں دونوں وقت کھانا بنتا اور باقاعدہ کمرشل انداز میں پیک ہوتا ہے۔ اس کے بعد اسے ہر دوپہر اور شام کو’ روٹی بینک ‘بھیج دیا جاتا ہے جہاں سے ضرورت مند اسے لے جاتے ہیں یا پھر گھروں پر ارسال کر دیا جاتا ہے۔

انہوں نے وی او اے کو بتایا کہ ایک دن میں تقریباً گیارہ سو افراد کا کھانا تقسیم کیا جاتا ہے۔ یہ تمام خرچ لوگوں کی جانب سے ملنے والے چندے اور امدادی رقم سے پورا ہوتا ہے۔ بےشمار لوگ فی کس کے حساب سے بھی روزانہ کی بنیاد پر رقم دے جاتے ہیں۔ ایک فرد کے کھانے کے 50 روپے لیے جاتے ہیں اس لحاظ سے کوئی دس تو کوئی پندرہ اور بعض لوگ اس سے بھی کہیں زیادہ افراد کے کھانے کے لئے نقد رقم دے جاتے ہیں۔ کراچی میں ضرورت مندوں کو مفت کھانا کھلانے کے لئے ایک دو نہیں متعدد رفاعی تنظیمیں اور ادارے کام کر رہے ہیں۔ سرجانی ٹاؤن میں پروین نامی ایک خاتون صرف تین روپے میں ایک وقت کا کھانا کھلاتی ہیں اور برسوں سے ان کا یہی معمول ہے۔

چھیپا نامی مشہور فلاحی ٹرسٹ بھی اپنے طور پر یہ انسانی خدمت انجام دے رہا ہے۔ شہر کے ہر حصے اور علاقے میں مختلف چوراہوں پر دوپہر کا سورج چڑھنے اور رات کا اندھیرا چھانے سے ذرا پہلے ’چھیپا دسترخوان ‘سج جاتے ہیں۔ ان دسترخوانوں پر دال روٹی اور سبزی ہی نہیں گائے اور بکرے کے گوشت کا سالن ملنا بھی معمول کی بات ہے۔ بے شمار لوگ صدقوں کی غرض سے بکرے ذبح کراتے اور چھیپا ٹرسٹ کو دے جاتے ہیں۔ پورے ملک میں مشہور ایک بڑی کنسٹرکشن کمپنی’ بحریہ‘ بھی اس خدمت پر مامور ہے ۔ ’ بحریہ دسترخوان‘ کی سب سے بڑی خوبی یہ ہے کہ یہاں آنے والوں کو سر راہ بیٹھنا نہیں پڑتا بلکہ’ بحریہ دسترخوان‘ کو دیکھ کر کسی بڑے ہوٹل کا گمان ہوتا ہے۔ نہایت صاف ستھرا ماحول، بہترین کھانے، ائیرکنڈیشن ماحول، باوردی ملازم، مہنگی کٹلری اور قیمتی برتن۔

رفاعی تنظیم کے ایک کارکن نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر وی او اے کو بتایا کہ’ بے شک بھوکے کو روٹی کھلانا بہت بڑی نیکی ہے لیکن کہیں ایسا تو نہیں اس کوشش میں ہم معاشرے کے افراد کو کھانے کی مفت سہولتیں دے کر انہیں ان کی ذمے داریوں سے راہ فرار کا موقع دے رہے ہوں؟ ‘
کارکن کا یہ بھی کہنا تھا کہ اس طرح نوجوانوں میں محنت کرنے کا جذبہ کم ہو جائے گا، خاص طور سے بچے ۔۔کم عمری سے ہی ان کے عادی ہوجائیں گے، ان میں اپنا مستقبل بنانے، حالات کو بدلنے اور اپنے لئے باعزت روزگار کے مواقع تلاش کرنے کا جذبہ ہی ختم ہو جائے گا۔ وہ شروع ہی سے دوسروں کے کندھوں کے عادی ہوجائیں گے ۔‘‘
وی او اے کے نمائندے نے اس پر ایک اور فلاحی تنظیم عالمگیر ویلفیئرٹرسٹ کے منیجر شکیل دہلوی سے گفتگو کی تو ان کا موقف تھا کہ’ انسان کا پیٹ خالی ہو تو جرائم کی راہ نکلتی ہے ۔ پیٹ کی آگ بجھانے کے لئے انسان کچھ بھی کر سکتا ہے ۔ بے روزگاری بہت بڑا عذاب ہے، بچے بھوک سے بلک رہے ہوں تو کلیجہ منہ کو آجاتا ہے ۔ اگر مفت د سترخوان سے معاشرے کے لوگوں کی خود انحصاری کی عادت ختم ہونے کا خدشہ ہے تو بہت سے سنگین مسائل بھی تو حل ہورہے ہیں۔ ‘
پاکستان کو غذائی قلت کا سامنا
انٹرنیشنل فوڈ پالیسی ریسر چ انسٹی ٹیوٹ، واشنگٹن کی جاری کردہ’ گلوبل ہنگرانڈیکس‘یعنی جی ایچ آئی‘2017کے مطابق پاکستان کو غذائی قلت کی شکل میں سنجیدہ خطرے کا سامنا ہے اور آنے والے برسوں میں صورت حال سنگین ہو سکتی ہے۔ غذائی کمی اور بھوک کا شکار 119 ترقی پذیر ملکوں کی فہرست میں پاکستان کا نمبر 106 ہے جبکہ انڈکس میں پاکستان کی بڑھتی ہوئی شرح یا اسکور اسے ’خطرناک ‘کیٹگری کی جانب لے جا رہا ہے۔

اکتیس 31 پاکستانی مسلم دنیا کی بااثر ترین شخصیات میں شامل

پاکستان کے سابق وزیرِاعظم نواز شریف سمیت 31 پاکستانی شخصیات دنیا کی 500 با اثر ترین شخصیات میں شمار کی گئی ہیں۔ اردن میں قائم ‘رائل اسلامک اسٹرٹیجک اسٹڈیز سینٹر’ کی طرف سے شائع کردہ اس فہرست میں 13 مختلف شعبوں بشمول فن و ثقافت، سیاست، سائنس و ٹیکنالوجی، مذہبی اور انتہاپسندی سے متعلق با اثر شخصیات کو شمار کیا گیا ہے۔ پاکستانی بری فوج کے سابق سربراہ راحیل شریف، مرحوم سماجی کارکن عبدالستار ایدھی کی بیوہ بلقیس ایدھی  بھی اس فہرست میں شامل ہیں۔

علاوہ ازیں پاکستان تحریکِ انصاف کے سربراہ عمران خان، جمعیت علمائے اسلام (ف) کے قائد مولانا فضل الرحمن، جماعت اسلامی کے امیر سراج الحق، انسانی حقوق کی سرگرم کارکن اور نامور وکیل عاصمہ جہانگیر، معروف معالج ڈاکٹر ادیب رضوی اور معروف گلوکارہ عابدہ پروین بھی ان شخصیات میں شامل ہیں۔ لیکن ان میں سے کوئی بھی شخصیت پہلی 50 بااثر شخصیات میں شامل نہیں۔ سابق جج اور معروف مذہبی دانشور مفتی تقی عثمانی فہرست میں ساتویں، تبلیغی جماعت کے امیر حاجی محمد عبدالوہاب چودھویں جب کہ معروف مبلغ مولانا طارق جمیل چوالیسویں نمبر پر ہیں۔

سولہ سالہ پاکستانی طالب علم نے نیوٹن کو بھی پیچھے چھوڑ دیا

ان کی عمر محض 17 برس ہے مگر اپنے سائنسی تحقیقاتی مضمون سے انھوں نے دورِ حاضر کے عالمِ طبیعات کو نہ صرف حیران کیا بلکہ تحقیق کے لیے ایک نیا زاویہ فراہم بھی کیا ہے۔ پاکستان کے صوبہ پنجاب کے شہر لاہور کے رہائشی محمد شہیر نیازی کی برقی چھتوں یعنی ‘الیکٹرک ہنی کوم’ پر کی گئی تحقیق پر مبنی مضمون گذشتہ ماہ رائل سوسائٹی اوپن سائنس جنرل نے شائع کیا ہے۔ یہ جریدہ دنیا بھر سے سائنس، ریاضی اور انجینیئرنگ کے میدان میں ہونے والی تحقیقات شائع کرتا ہے۔ بی بی سی سے بات کرتے ہوئے اے لیول کے طالبِ علم شہیر نیازی نے فخر سے بتایا کہ کم عمری میں سائنسی تحقیق شائع کرنے کے اعتبار سے انھوں نے ماضی کے مشہور سائنسدان اور ماہرِ طبیعیات آئزک نیوٹن کو پیچھے چھوڑ دیا۔

‘نیوٹن کا پہلا تحقیقاتی مضمون بھی اسی رسالے میں شائع ہوا تھا، اس وقت ان کی عمر 17 برس تھی۔ جب میرا مضمون گزشتہ ماہ شائع ہوا تو تب میں 16 برس کا تھا۔’ شہیر نے گزشتہ ستمبر کی 25 تاریخ کو 17ویں سالگرہ منائی۔ ماہرِ طبیعیات برقی چھتے کے رحجان سے کئی دہائیوں سے واقف ہیں۔ تاہم یہ برقی چھتہ ہوتا کیا ہے اور شہیر کی تحقیق نے ایسے کون سے پہلو عیاں کیے ہیں جس پر دنیا کہ سائنسدان ان کے معترف ٹھہرے؟ گھنے گھنگھریالے بالوں کے ساتھ ناک پر چشمہ بٹھائے دبلی پتلی قدوقامت والا نوجوان سائنس دان بخوبی جانتا ہے کہ اس سے یہ سوال ضرور کیا جائے گا۔ ان کے گھر میں داخل ہوں تو لاؤنج ہی میں ایک میز پر ڈبوں میں برقی تاروں اور سرکٹس کا ڈھیر لگا ملتا ہے۔ یہاں بیٹھ کر وہ تجربے کرتے ہیں۔

انتہائی تحمل کے ساتھ، ٹھہرے ہوئے لہجے میں شہیر برقی چھتوں کے تصور کی وضاحت کرتے ہیں۔ ‘سادہ الفاظ میں یہ کہا جا سکتا ہے کہ کائنات میں ہر چیز کو توازن چاہیے۔ برقی قممے اسی رجحان کو ظاہر کرتے ہیں کیونکہ ان کی شش پہلو شکل کائنات میں سب سے متوازن ساخت ہے۔’ سائنسی تجربے میں دو الیکٹروڈز ہوتے ہیں، ایک سوئی اور دوسری آہنی پلیٹ۔ اس پلیٹ پر تیل ڈال دیا جاتا ہے۔ تیل میں سے بجلی نہیں گزر سکتی۔ ایک الیکٹروڈ یعنی سوئی سے جب ہائی وولٹیج گزرتی ہے تو وہ ایک چھوٹے پیمانے پر ایسا ہی عمل ہوتا ہے جیسے آسمانی بجلی گرتی ہے۔

جب برق پاروں کا دباؤ تیل پر زیادہ بڑھ جاتا ہے تو وہ انھیں راستہ دے دیتا ہے اور وہ دوسرے الیکٹروڈ سے جا ملتے ہیں۔ تاہم تیل نہیں چاہتا کہ اس کی شکل بگڑے اس لیے جب وہ توازن دوبارہ حاصل کرتا ہے جس کے نتیجے میں شہد کی مکھیوں کے چھتے کی شکل کے ڈھانچے بنتے ہیں۔ شہیر کے مطابق کائنات میں توازن کے تصور کے اس مخصوص رجحان پر تحقیق ہوئی ضرور تھی مگر زیادہ نہیں۔ یہی وجہ ہے کہ جب ان کی والدہ نے سنہ 2016 میں ان کے لیے روس میں ہونے والے بین الاقوامی نوجوان ماہرِ طبیعیات کے ٹورنامنٹ، جسے علمِ طبیعات کا ورلڈ کپ بھی کہا جاتا ہے، میں مقابلہ کرنے کا موقع تلاش کیا تو وہاں انھیں یہی اسی سائنسی مسئلے پر کام کرنے کو کہا گیا۔

شہیر کی تحقیق جس نئے پہلو کو سامنے لائی وہ تھا تیل کی سطح پر حرارت کا فرق۔ شہیر نے اس عمل کی تصویر کشی بھی کی جو اس سے پہلے کبھی نہیں ہوا تھا۔ اس وقت انھیں ویسا ہی احساس ہوا جیسا انہیں بچپن میں پہلی دفعہ گھر کی چھت پر کیے گئے کیمیکل تجربے کی کامیابی پر ہوا تھا۔ ‘مجھے معلوم تھا کہ ایسا پہلے دنیا میں کسی نے نہیں کیا۔ میں نے اس حوالے سے ماضی میں کی جانے والی تحقیقات پر مضامین پڑھ رکھے تھے۔’ روس سے واپسی پر انھوں نے اس تحقیق کو دنیا کہ کسی اچھے رسالے میں شائع کرنے کی ٹھانی جس کے لیے انھیں مزید ایک سال تحقیق کرنی پڑی۔

اس دوران انھوں نے انٹرنیٹ کی مدد حاصل کی اور تجربوں کے لیے وہ لاہور یونیورسٹی آف مینیجمینٹ اینڈ سائنسز کی لیبارٹری استعمال کرتے رہے۔ شہیر کو علم اور تحقیق سے دوستی کا ماحول گھر ہی سے ملا۔ ان کے والد اور دادا کی دلچسپی سائنس اور خصوصاٌ علمِ طبیعیات میں تھی۔ 11 برس کی عمر سے وہ انٹرنیٹ پر موجود مختلف موضوعات پر باقاعدہ کورس کر رہے ہیں۔ ایسے ہی ایک مشہور آن لائن پورٹل ‘کورسیرا’ پر وہ اب تک 25 کے قریب کورس کر چکے ہیں۔
‘میں سکول میں پڑھائی جانے والی چیزوں سے جب بیزار ہو جاتا ہوں تو آن لائن کورسز کا رخ کرتا ہوں۔ اس طرح آپ اچھی یونیورسٹیوں سے گھر بیٹھے تعلیم حاصل کر سکتے ہیں۔’

ہر سائنسدان کی طرح شہیر کے ذہن میں تجسس کی رو ہر وقت موجود رہتی ہے۔ تاہم ساتھ ہی وہ ٹھہراؤ کے بھی متلاشی رہتے ہیں۔ ان کی والدہ کہتی ہیں شہیر موسیقی سے بھی دلچسپی ہے۔ گھر میں ان کا ایک عدد پیانو موجود ہے جسے بجانا بھی انہوں نے انٹرنیٹ سے سیکھا ہے۔ وہ ایک اچھے مصور بھی ہیں اور خاکے کافی اچھے بنا لیتے ہیں۔ سائنس سے دلچسپی کی وجہ سے ان کے گزر اوقات کے لیے کھلونوں میں بھی دوربین یا دور درشک جیسی چیزیں شامل ہیں۔
شہیر کہتے ہیں کہ برقی چھتوں کے چمل سے حاصل ہونے والے علم کا استعمال بائیو میڈیسن، پرنٹنگ اور انجینیئرنگ میں ہوتا ہے۔ ‘اس طریقے سے ہم برقی رو یا تیل کے ذریعے دوا کی ترسیل کر سکتے ہیں۔ مختلف طریقوں سے تیل کے ساتھ جوڑ توڑ کی جا سکتی ہے۔’

مستقبل میں شہیر طبیعات کے حوالے سے علم کو بڑھانے کا ارادہ رکھتے ہیں اور دنیا کی کسی اچھی یونیورسٹی سے تعلیم حاصل کرتے ہوئے اس شعبے میں تحقیق کو آگے بڑھانا چاہتے ہیں۔ وہ کہتے ہیں انھیں اندازہ نہیں تھا کہ انہیں اس قدر پذیرائی ملے گی۔ تاہم اس بات پر وہ خوش ہیں کہ ان کی وجہ سے دنیا میں پاکستان کی نیک نامی ہوئی ہے۔

عمر دراز ننگیانہ
بی بی سی اردو، لاہور

گوگل کا صادقین کو زبر دست خراج تحسین

گوگل نے پاکستان کے نامور مصور صادقین کو ان کے یوم پیدائش پر خراج تحسین پیش کیا ہے۔ پاکستان کے معروف مصور، خطاط اور کیلی گرافر سید صادقین احمد 30 جون 1930 کو بھارت کے شہر امروہا میں پیدا ہوئے اور آپ کا تعلق بھی ایک خطاط فیملی سے تھا۔ آپ نے 1940 کے عشرے میں ترقی پسند رائٹرز اینڈ آرٹسٹ مومنٹ میں شمولیت اختیار کی لیکن آپ کے اصل ٹیلنٹ کو حسین شہید سہروردی نے متعارف کروایا۔ صادقین نے اپنے فن میں نکھار پیدا کرنے کے لئے کچھ وقت پیرس میں بھی گزارا اور آپ کو جنوبی ایشیا میں ایک آئیکونک مصور کے طور پر یاد کیا جاتا ہے۔

گوگل نے پاکستان کے اس عظیم مصور کو ان کے یوم پیدائش کے موقع پر خراج تحسین پیش کرنے کے لئے اپنا ڈوڈل تبدیل کیا ہے۔ واضح رہے کہ صادقین کو ان کی فنی خدمات کے پیش نظر حکومت پاکستان کی جانب سے تمغہ امتیاز، تمغہ حسن کارکردگی اور ستازہ امتیاز جیسے بڑے قومی اعزازات سے بھی نوازا گیا۔ آپ کی فنی خدمات کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا اور آپ کے نام سے کراچی میں صادقین انسٹیٹیوٹ بھی قائم ہے۔

جب راشد منہاس نے دشمن کی سازش ناکام بنائی

راشد منہاس 17 فروری 1951 کو کراچی میں پیدا ہوئے اور وہ نشان حیدر کا اعزاز حاصل کرنے والے سب سے کم عمر اور پاک فضائیہ کے پہلے آفیسر ہیں۔ راشد منہاس نے اپنی ابتدائی تعلیم کراچی میں حاصل کی اور سترہ سال کی عمر میں پاک فضائیہ کی رسالپور اکیڈمی میں بطور فلائنگ کیڈٹ داخلہ لیا۔ 1971 میں راشد مہناس نے اکیڈمی سے جنرل ڈیوٹی پائلٹ کی حیثیت سے گریجوٹ کیا اور انہیں کراچی میں پی اے ایف بیس مسرور پر پوسٹ کیا گیا تاکہ لڑاکا پائلٹ کی تربیت حاصل کر سکیں۔

20اگست 1971 کو زیرتربیت پائلٹ کی حیثیت سے راشد منہاس ٹی 33 جیٹ ٹرینرکو اڑانے والے تھے جب بنگالی پائلٹ انسٹرکٹر فلائٹ لیفٹیننٹ مطیع الرحمان بھی ان کے ساتھ سوار ہوا۔ دوران پرواز مطیع الرحمان نے راشد منہاس کو سر پرضرب لگا کر بے ہوش کیا اور پرواز کا کنٹرول سنبھال کر طیارے کا رخ ہندوستان کی جانب موڑ دیا۔ اس وقت جب ہندوستان کا فاصلہ 40 میل رہ گیا تھا، راشد منہاس کو ہوش آیا اور انہوں نے طیارے کا کنٹرول دوبارہ حاصل کرنے کی کوشش کی، اس میں ناکامی کے بعد نوجوان پائلٹ کے پاس اپنے طیارے کو ہندوستان لے جانے سے روکنے کا ایک ہی راستہ رہ گیا تھا اور انہوں نے ہندوستانی سرحد سے محض 32 میل دور طیارے کو گرا کر اپنی جان پاکستان کے لیے قربان کر دی۔

راشد منہاس کو 21 اگست 1971 کو مکمل فوجی اعزاز کے ساتھ سپرد خاک کیا گیا اور ان نوجوان پائلٹ کے پورے خاندان سمیت پاک فضائیہ اور دیگر مسلح افواج کے عہدیداران اس موقع پر موجود تھے۔ راشد منہاس کو بعد از وفات پاکستان کا سب سے اعلیٰ فوجی اعزاز نشان حیدر دینے کا اعلان اس وقت کے صدر جنرل یحییٰ خان نے کیا اور اس طرح وہ اس اعزاز کو پانے والے سے سب سے کم عمر اور پاک فضائیہ کے اب تک واحد رکن بن گئے۔ اپنے بیٹے کی شہادت پر راشد منہاس کے والد عبدالماجد منہاس نے یہ کہا ” اگرچہ بیٹے کی وفات کا دکھ کبھی ختم نہ ہونے والا ہے مگر مجھے اس بات پر فخر ہے کہ اس نے ایک نیک مقصد اور ملک و قوم کے وقار کے لیے اپنی جان قربان کی”۔

اٹھائیس اگست 1971 کو دیئے جانے والے ایک انٹرویو میں عبدالماجد منہاس نے کہا کہ ان کا بیٹا شروع سے ہی ایسے کرئیر میں دلچسپی رکھتا تھا جس کے ذریعے وہ ملک و قوم کی خدمت اپنی بہترین صلاحیتوں کے ساتھ کر سکے۔
ان کا کہنا تھا کہ راشد منہاس زمانہ طالبعلمی میں جنگوں پر لکھی جانے والی کتابوں کو پڑھنا پسند کرتے تھے اور ان کے اہم اقوال اپنی ڈائری پر نقل کر لیتے تھے۔ راشد منہاس کی ڈائری پر درج اقوال میں سے ایک میں کہا گیا تھا ” ایک شخص کے لیے سب سے بڑا اعزاز اپنے ملک کے لیے قربان کردینا اور قوم کی امیدوں پر پورا اترنا ہے”۔

راشد منہاس کی تعلیم کے حوالے سے سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ان کے بیٹے نے راولپنڈی کے میری کیمبرج اسکول میں ابتدائی تعلیم حاصل کی اور سنیئر کیمبرج کراچی سے کیا۔ راشد منہاس نے پاک فضائیہ 1968 میں پاک فضائیہ کا حصہ بنے اور پی اے ایف اکیڈمی سے سائنس کے مضمون میں گریجویشن ڈگری اعزاز کے ساتھ حاصل کی۔ عبدالماجد منہاس نے کہا کہ ان کی بڑا بیٹا ٹیکنیکل مزاج رکھتا تھا اوربارہ سال کی عمر میں ڈرائیونگ سیکھ چکا تھا۔ اس کی زاتی لائبریری میں دیگر موضوعات کے ساتھ ساتھ الیکٹرونکس اور علم فلکیات کی کتابیں بھی شامل تھیں۔ اس کے مشاغل میں پڑھنا، فوٹوگرافی، ہاکی اور بلیئرڈ شامل تھے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ راشد منہاس ابتدائی عمر سے مزاجاً ایک آئیڈیلسٹ تھے جو اپنے ملک کی خدمت کرنا چاہتا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ راشد منہاس اپنے بہنوئی میجر ناصر احمد خان سے بہت زیادہ متاثر تھے جنھیں ستارہ جرات سے نوازا گیا تھا ” میرا بیٹا ہر کام کو مکمل کرنے والا، متعدل مزاج لڑکا تھا اور اسے پیسہ کمانے سے دلچسپی نہیں تھی”۔ عبدالماجد منہاس نے کہا کہ راشد منہاس اپنی پیدائش سے ہی پاک فضائیہ سے جڑا ہوا تھا کیونکہ اس کی پیدائش کراچی کے ڈرگ روڈ پر واقع پی اے ایف ہسپتال میں ہوئی ” میرے بیٹے نے اتنی بڑی قربانی دے کر میرا سر فخر سے بلند کر دیا ہے”۔ انہوں نے مزید کہا ” ہمارے پاس ایسے فوجی ہیں جو اپنی زندگیاں قوم پر نچھاور کرنے کے لیے تیار ہیں”۔

تیرہ سالہ پاکستانی احسن طاہر کا نام ہیکنگ کے ہال آف فیم میں شامل

پاکستان کے 13 سالہ شہری احسن طاہر کا نام مائیکروسوفٹ اور گوگل کی جانب سے ہیکنگ کے ہال آف فیم میں شامل کیا گیا ہے۔ کراچی کے رہائشی احسن طاہر نویں جماعت کے طالبعلم اور ایک ایتھیکل ہیکر ہیں۔ ایک سال قبل اُن کی اپنی ہی بنائی ہوئی ویب سائٹ ہیک ہو گئی جسے واپس حاصل کرنے کے لیے انھوں نے کامیاب کوشش کی۔ یہیں سے ان کے سفر کا آغاز ہوا کہ کسی ویب سائٹ کو کس طرح محفوظ بنایا جا سکتا ہے۔ احسن طاہر کا کہنا ہے کہ ’پاکستانی انفراسٹرکچر جیسا کہ حکومتی ویب سائٹس اور پورٹلز سمیت تمام نئے برنس کو بھی محفوظ بنانا ممکن ہے۔‘ امریکی ریاست کیلی فورنیا میں ’ہیکر ون اینڈ بگ کراؤڈ‘ کمپنی نے ان صلاحیتوں کا اعتراف کرتے ہوئے انھیں امریکہ آنے کی دعوت دی۔

احسن طاہر نے 18 مارچ سے یکم اپریل تک اپنے دورے میں کمپنی کے بورڈ آف ڈائریکٹرز سے ملاقات بھی کی، جس میں انھوں نے کچھ بڑی انٹرنیشنل ٹیکنالوجی کمپنیز کو اُن کے ڈیٹا بیس میں سکیورٹی نقائص سے آگاہ کیا۔ اس تجربے سے ان کا رجحان ’ایتھیکل ہیکنگ‘ کی جانب مزید بڑھ گیا۔ احسن کا خیال ہے کہ دیگر ممالک کی طرح پاکستان میں بھی کمپنیز کی ویب سائٹس، سماٹ فونز، سماٹ ٹی وی حتیٰ کہ کاریں ہیک کیے جانے کے خطرات سے نمٹا جا سکتا ہے لیکن اس کے لیے سائبر سکیورٹی کے میدان میں پاکستان کو بھی توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اگر ماہرین ’آئی او ٹی‘ ٹیکنالوجی کی طرف توجہ دیں تو مسئلے کا حل ممکن ہے۔

پاکستان میں آئے دن ویب سائٹس ہیک ہونے کی شکایات موصول ہوتی ہیں۔ اُن کا خاتمہ باؤنٹی پروگرامز کے تحت ممکن ہے۔ یہ پروگرامز ہیکنگ کو شفاف بناتے ہیں اور ایتیھکل ہیکرز قانون کے دائرے میں رہ کر کمپنیوں کے ڈیٹا بیس کی سکیورٹی کو لاحق خطرات یا اُن میں خامیاں تلاش کر کے اداروں کی مدد کر سکتے ہیں۔ انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ماہر محمد مناف کا کہنا ہے کہ ’ایتیھکل ہیکنگ ایک آرٹ ہے۔ پاکستان میں ٹیلنٹ کی کوئی کمی نہیں۔ احسن طاہر جیسے بچے جو اس کم عمری میں جس نہج پر سوچتے ہیں اور جس مقام پر ہیں یہ وہ اچیومنٹ ہے جو ہیکنگ کی دنیا میں ایک عام شخص اپنے 17 سالہ تجربے سے حاصل کرتا ہے۔‘ ماہرین کے مطابق حکومت کی جانب سے ہائر ایجوکیشن کمیشن کی توجہ اس طرف دلانے کی ضرورت ہے کہ اداروں کے لیے صرف پروگرامنگ ہی نہیں سکیورٹی بھی توجہ طلب شعبہ ہے۔

صبا ناز
اسلام آباد

کاروان علم فائونڈیشن پر مہربانی کریں

زہرہ نواز کے والد آرمی میں سپاہی تھے‘وہ کراچی میں تعینات تھے‘ریٹائرمنٹ کے بعد انھوں نے کراچی میں گھر بنا لیا‘ زہرہ کا ایک بڑا بھائی اور ایک چھوٹی بہن تھی‘ اللہ نے تینوں کو ذہانت اور قابلیت سے نواز رکھا تھا‘حالات معمول پر چل رہے تھے کہ محمد نواز کے مزاج میں تبدیلیاں آنے لگیں‘ انھوں نے ایک دن گاؤں واپس جانے کا اعلان کر دیا‘ بیوی نے بچوں کے حوالے سے خدشات کا اظہار کیا لیکن بے فائدہ‘خوشحال گھرانے میں لڑائی جھگڑے معمول بن گئے‘ بات مار کٹائی تک پہنچ گئی‘ زہرہ نے ان دنوں ایف ایس سی پارٹ ون کے امتحانات دینے تھے لیکن اس کے والد نے اسے کمرے میں بند کر دیا‘ بھائی نے مداخلت کر کے بہن کے پیپر دلوائے جس پر باپ بیٹے کا بھی دشمن ہو گیا۔

بالآخر باپ گھر بیچ کر آبائی گاؤں چلا گیا‘ وہاں اس نے دوسری شادی کر لی اور زہرہ کی والدہ کو طلاق دے دی‘ والدہ بچوں کو لے کرلاہور آ گئی‘ اس نے ایک کمرہ کرائے پر لیا‘ بھائی نے ایف اے کے بعد تعلیم چھوڑ دی اور نوکری شروع کر دی‘ خود زہرہ نے ٹیوشن پڑھانا شروع کردی لیکن وہ کوشش کے باوجود اتنی رقم جمع نہ کر سکی کہ ایف ایس سی پارٹ ٹو میں داخلہ لے سکتی‘ سال اول میں اس نے بہت اچھے نمبرحاصل کیے تھے‘ وہ صبح چھ بجے سے رات نو بجے تک مختلف کلاسز کے بچوں کو پڑھاتی تھی‘ایک سال ضایع ہونے کے بعد اس نے سیکنڈ ائیر میں داخلہ لیا‘معاشی دباؤ اور ٹیوشن پڑھانے کی وجہ سے اس کے سیکنڈ ائیر میں خاطر خواہ نمبر نہ آ سکے جس کی وجہ سے اسے میڈیکل کالج میں داخلہ نہ مل سکا۔ اس نے دوبارہ امتحان دینے کا فیصلہ کیا اور یوں اس کا مزید ایک سال ضایع ہو گیا۔

اگلے سال اس نے دوبارہ انٹری ٹیسٹ دیا اور اس کا نام آرمی میڈیکل کالج میںویٹنگ لسٹ میں آ گیا‘ زہرہ کو آرمی میڈیکل کالج سے ایڈمیشن کال آئی تو فیملی کے پاس راولپنڈی جانے کے لیے اخراجات بھی نہیں تھے‘ ڈاکٹر شاہد صدیقی (موجودہ وائس چانسلر علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی) کی بیگم کے زہرہ کی والدہ سے بہنوں جیسے تعلقات تھے‘ انھوں نے زہرہ کے ابتدائی اخراجات اورفیس ادا کر دی‘ آرمی میڈیکل کالج میں کلاسز جاری تھیں لیکن زہرہ کو اس بات کی فکر رہتی تھی کہ آیندہ کے تعلیمی اخراجات کیسے پورے ہوں گے‘اس نے کئی فلاحی اداروں اور مخیر حضرات سے رابطہ کیا لیکن کہیں سے مثبت جواب نہ ملا‘ اس نے آخر میں کاروان علم فاؤنڈیشن سے رابطہ کیا اور اسے اسکالرشپ ملنا شروع ہو گیا‘ زہرہ نے ڈینٹل ڈاکٹر کی تعلیم مکمل کی اور یہ آج نہ صرف اپنے خاندان کو سپورٹ کر رہی ہے بلکہ یہ اسپیشلائزیشن کے اخراجات بھی خود ادا کر رہی ہے۔

دوسری کہانی محمد افضل اور ان کی بیگم کشور سلطانہ کی ہے‘ یہ دونوں گوجرانوالہ کے ایک غریب گھرانے سے تعلق رکھتے ہیں‘ان دونوں نے عزم و ہمت کی ایسی مثال قائم کی جس کی نظیر نہیں ملتی‘ اللہ تعالیٰ نے انھیں سب سے پہلے اولاد نرینہ دی‘ بیٹے کا نام عمیر افضل رکھا گیا‘عمیر پیدائشی نابینا تھا‘ اس کے بعد ان کے ہاں بیٹی عمارہ افضل پیدا ہوئی‘وہ بھی پیدائشی نابینا تھی‘ غریب میاں بیوی دوسری اولاد بھی نابینا ہونے پر آبدیدہ ہو گئے لیکن لبوں پر شکوہ نہ لائے‘ اس کے بعد اللہ تعالی نے انھیں دوسرے بیٹے زبیر سے نوازا لیکن زبیر کو بھی قدرت نے بینائی سے محروم رکھا‘ ہر والدین کی طرح محمد افضل اورکشور سلطانہ کی خواہش بھی تندرست اولاد کی تھی لیکن قدرت کو یہ منظور نہیں تھا‘ اس کے بعد ان کے ہاں آنسہ افضل کی پیدائش ہوئی‘ یہ بچی ریڑھ کی ہڈی کے ٹیڑھے پن کے ساتھ دنیا میں آئی‘محمد افضل اور اس کی بیوی کے پاس دو آپشن تھے۔

یہ اپنے بچوں کو فقیر بنا دیتے یا پھر انھیں اپنے پاؤں پر کھڑا کر دیتے‘ میاں بیوی دوسرے آپشن پر چلے گئے‘ انھوں نے معذور بچوں کو علم سے آراستہ کرنے کا فیصلہ کیا‘محمد افضل محنت مزدوری کر کے گھر کا چولہا چلاتا رہا جب کہ کشور سلطانہ نے خود کو چار معذور بچوں کی پرورش اور تعلیم کے لیے وقف کر دیا‘ زندگی کی گاڑی آگے بڑھتی گئی‘جب عمیر افضل نے میٹرک کا امتحان پاس کر لیا تو میاں بیوی نے بچوں کی بہتر تعلیم کے لیے لاہور شفٹ ہونے کا فیصلہ کیا‘ محمد افضل نے لاہور میں کریانے کی دکان کھول لی‘ دکان کی آمدن سے بمشکل گھر کا چولہا جلتا تھا ‘بچوں کی تعلیم‘ آمدورفت اور علاج معالجے کے لیے سخت مالی مشکلات نے حوصلے آزمانا شروع کر دیے۔

ایک دن کشور سلطانہ نے نماز کے بعد بھیگی آنکھوں سے اللہ تعالیٰ سے مدد مانگی‘اسی شام انھیں ایک جاننے والے کی معرفت کاروان علم فاؤنڈیشن کے بارے میں علم ہوا‘ کشورسلطانہ درخواست لے کر کاروان علم فاؤنڈیشن کے دفتر پہنچی‘ فاؤنڈیشن نے چاروں بچوں کی ذمے داری اٹھا لی‘ کاروان علم فاؤنڈیشن کے تعاون سے عمیر افضل نے گریجوایشن‘ عمارہ افضل نے گورنمنٹ کالج یونیورسٹی سے ایم فل‘ آنسہ افضل نے کنیئرڈ کالج سے بی اے آنرز اور زبیرافضل نے گریجوایشن تک تعلیم حاصل کی‘ آج یہ چاروں بچے معذور ہونے کے باوجود معاشرے کے فعال شہری ہیں۔

کاروان علم فاؤنڈیشن پندرہ سال سے طلبہ کو وظائف جاری کررہی ہے‘ فاؤنڈیشن کا دائرہ کار پورے پاکستان تک پھیل چکا ہے‘ آج پاکستان کی کوئی یونیورسٹی‘ میڈیکل کالج‘ انجینئرنگ یونیورسٹی یا کالج ایسا نہیں جہاں فاؤنڈیشن کے تعاون سے طلبہ تعلیم حاصل نہ کر رہے ہوں‘ کاروان علم فاؤنڈیشن نے وظائف جاری کرنے کے حوالے سے بہت سے قابل ستائش اقدامات کیے‘ ادارے کے دروازے ضرورت مند طلبہ کے لیے سارا سال کھلے رہتے ہیں‘ طلبہ کو تعلیم کے دوران جس مرحلے پر بھی مشکلات کا سامنا ہوتا ہے‘ کاروان علم فاؤنڈیشن ان کی مدد کرتی ہے‘ کاروان علم فاؤنڈیشن نے وظائف کا سلسلہ اتنا باوقار بنا رکھا ہے کہ کسی مرحلے پر طالب علموں کی عزت نفس مجروح نہیں ہوتی‘ ہر طالب علم کی درخواست کا انفرادی جائزہ لیا جاتا ہے اور ہر طالب علم کی تعلیمی ضروریات کو مدنظر رکھتے ہوئے وظائف جاری کیے جاتے ہیں۔

فاؤنڈیشن درخواست گزار طلبہ کو سالانہ فیس‘ سمیسٹر فیس‘ کرایہ ہاسٹل‘ ماہوار خرچ‘ طعام‘ کتب اور کرایہ آمدورفت تک ادا کرتی ہے‘ کاروان علم فاؤنڈیشن زیر کفالت طلبہ کی بیوہ ماؤں اور ضعیف والدین کو گھریلو اخراجات کے لیے بھی وظائف دیتی ہے تاکہ طلبہ مکمل اطمینان اور یکسوئی سے اپنی تعلیم جاری رکھ سکیں‘ کاروان علم فاؤنڈیشن جب کسی کو وظیفہ جاری کرتی ہے تو یہ اس کی سرپرست بن جاتی ہے‘ یہ پورا سال طالب علم کی کارکردگی کا جائزہ لیتی رہتی ہے‘ یہ ہر ضرورت کے لیے مدد فراہم کرنے کے لیے دستیاب رہتی ہے‘ کاروان علم فاؤنڈیشن غریب طبقہ کے لوگوں کو ضروریات کے لیے زکوٰۃ اور عطیات کی رقم فراہم کرنے کے بجائے اس رقم سے ان کے بچوں کو علم و ہنر سے آراستہ کرتی ہے تا کہ یہ مستقل طور پر خاندان کا سہارا بن سکیں‘ کاروان علم فاؤنڈیشن یتیم اور خصوصی طلبہ کو ترجیہی بنیادوں پر وظائف جاری کرتی ہے۔

یہ ادارہ اب تک 5524 طلبہ کو ساڑھے بارہ کروڑ روپے کے وظائف دے چکا ہے‘ وظائف حاصل کرنے والے طلباء میں 937 یتیم طلبہ اور 333 خصوصی طلبہ (نابینا‘ پولیو زدہ اور حادثات کی وجہ سے معذور) شامل ہیں‘ مالی اعانت حاصل کرنے والوں میں ایم بی بی ایس (ڈاکٹر) کے1314‘ بی ڈی ایس (ڈاکٹر آف ڈینٹل سرجری) کے 51‘ فزیوتھراپی (ڈاکٹر آف فزیوتھراپسٹ) کے 45‘ ڈی وی ایم (ڈاکٹر آف ویٹرنری سائنسز) کے121‘ ڈی فارمیسی (ڈاکٹر آف فارمیسی) کے99‘ ایم ایس سی کے 135، ایم اے کے133‘ ایم کام کے 40‘ ایم بی اے کے 58‘ ایم پی اے کے 05‘ ایم فل کے 19‘ بی ایس سی انجینئرنگ کے1398‘ بی کام آنرز کے159‘ بی ایس آنرز کے 701‘ بی بی اے کے 61‘ اے سی سی اے کے 18‘ سی اے کے 04‘ بی ایس ایڈ‘ بی ایڈ کے 41‘ ایل ایل بی کے 14‘بی اے آنرز کے45‘ بی اے کے73‘ سی ایس ایس کا 01‘ بی ٹیک کے 23‘ ڈپلومہ ایسوسی ایٹ انجینئرنگ کے 161‘ ایف ایس سی کے 510‘ ایف اے کے 90‘ آئی کام کے 52‘ ڈی کام کے05‘ آئی سی ایس کے17 میٹرک اور انڈر میٹرک کے 131 طلبا و طالبات شامل ہیں۔

میری آپ سے درخواست ہے آپ مہربانی فرما کر اپنی زکوٰۃ‘ صدقہ اور فطرہ کاروان علم فاؤنڈیشن کو عطیہ کریں‘ آپ کی یہ عنایت بے شمار گھروں میں علم کے چراغ جلا دے گی‘ آپ اپنے عطیات میزان بینک کے اکاؤنٹ نمبر0240-0100882859 میں جمع کروا سکتے ہیں۔ آپ67 کشمیر بلاک ‘علامہ اقبال ٹاؤن لاہورکے پتے اور ای میل info@kif.com.pk پرفاؤنڈیشن سے رابطہ بھی کر سکتے ہیں۔ مزید تفصیلات کے لیے موبائل نمبر 0321-8461122 پر رابطہ کیا جاسکتا ہے۔

جاوید چوہدری

سیلانی ٹرسٹ…دکھی دلوں کا سہارا

ہمارے حکمران ناراضی کا اظہار کرتے ہیں اگر ان سے یہ کہا جائے کہ حکومتوں
کی طرز حکمرانی بہتر نہیں ہے ۔ اپنی خامیوں اور کوتاہیوں پر نظر دوڑانے یا تنقید کے مثبت پہلو تلاش کرنے کی بجائے ناک منہ بنانا شروع کر دیتے ہیں۔ یہ نہیں سوچتے کہ وہ جس انداز میں حکومت چلا رہے ہیں ، اس کے نتیجے میں مخلوق مصائب کا شکار ہے۔ حکومتی عہدیدار کیوں نہیں اپنی اصلاح کے لئے ان غیر سرکاری تنظیموں کی کارکردگی کا جائزہ لیتے ہیں جو بیرون ملک سے کسی مالی تعاون کی بجائے اسی ملک کے عام و خاص لوگوں کے چندوں سے اپنی تنظیم چلاتے ہیں۔ میرے لئے تو حیرانی کی بات تھی جب ایک سرکاری عہدیدار ایک غیر سرکاری تنظیم سے یہ کہہ رہے ہوں کہ حیدرآباد میں ایک کولڈ سٹوریج مردہ خانے کی ضرورت ہے جہاں لاشوں کو ان کی شناخت ہونے تک رکھا جا سکے تا کہ لوگ لاوارث قرار دے کر دفنا نہیں دئے جائیں۔

یہ غیر سرکاری تنظیم یعنی این جی او سیلانی ویلفیئر ٹرسٹ ہے جس نے سالانہ سمپوزیم 2017ء حیدرآباد میں کیا۔ مہمان خصوصی حیدرآباد کے ایس ایس پی عرفان بلوچ تھے۔ سیلانی ، دکھی دلوں کا سہارا، کے سرپرست حضرت مولانا بشیر فاروقی قادری صاحب ، ٹرسٹ کے صدر ذکریا لاکھانی، ٹرسٹ کے چیئر مین افضل چامڑیا سمیت درجنوں ملازمین اور رضا کار موجود تھے۔ اس موقع کی مناسبت سے ان مخیر حضرات کو بھی مدعو کیا گیا تھا جن کی مالی سرپرستی کے نتیجے میں سیلانی ٹرسٹ کام کرتا ہے۔ مولانا بشیر صاحب بتا رہے تھے کہ سیلانی کا نام حضرت خواجہ محکم الدین سیلانی رحمت اللہ علیہ کے اسم مبارک کی نسبت سے رکھا گیا ہے اور 1999ء میں ایک کمرے اور تین افراد کے ساتھ کام شروع کیا گیا تھا۔ سیلانی کراچی اور حیدرآباد میں وہ واحد ادارہ ہے جو سینکڑوں افراد کو سلیقہ کے ساتھ صاف ستھرے طریقے سے کھانا کھلاتا ہے۔ سیلانی والے کہتے ہیں کہ روزانہ 63 ہزار لوگوں کے کھانے کا انتظام کیا جاتا ہے۔ اس کھانے کی وجہ سے سفید پوش لوگ اپنا پیٹ بھرتے ہیں۔ اس بلا معاوضہ کھانے کی خوبی یہ ہے کہ اس میں زکوۃ کی رقم نہیں لگائی جاتی ہے۔

سیلانی کا کام قابل تعریف ضرور ہے لیکن سیلانی کے نگرانوں نے جس انداز میں کام پھیلا لیا ہے وہ کم از کم ہر اس شخص کے لئے باعث تشویش ہے جو یہ سمجھتا ہے کہ بڑے حجم کی چیز یا اونچی عمارت کو ہر وقت خطرہ ہی رہتا ہے۔ محدود وسائل کے حامل لوگوں کو کام پھیلانے کی بجائے محدود کام کرنا اور آمدنی بہتر کرنا ہی بہتر ہوتا ہے۔ ایک زمانے میں شاہکار کتابوں کے نام سے سید قاسم محمود صاحب نے سستی کتابیں شائع کرنے کا آغاز کیا تھا۔ اس زمانے میں تین روپے کی وہ کتاب دستیاب ہوتی تھی جو محدود وسائل والے لوگ خرید نہیں پاتے تھے۔ پھر انہوں نے اضافہ کرنا شروع کیا، نئے نئے کتابی سلسلے شروع کئے، نتیجہ یہ نکلا کہ کام تو پھیل گیا، اخراجات بڑھ گئے اور بڑے بڑے نام والے پبلشر بھی ان کے در پے ہو گئے۔

ان پبلشروں نے انہیں میدان سے بھگانے کے لئے خود بھی سستی کتابوں کا سلسلہ شروع کر دیا اور میں یہ سمجھتا ہوں کہ قاسم محمود صاحب کو کام پھیلانے پر لگا دیا تا کہ کام سمٹ نہ سکے اور ان کا شاہ کار ادارہ سمٹ جائے۔ جب شاہ کار سمٹا تو بڑے پبلشروں نے بھی اپنی سستی کتابوں کو سمیٹ لیا۔ سمپوزیم کے انعقاد پر سیلانی والوں نے جس طرح پیسہ بہایا وہ قابل تعریف قرار نہیں دیا جا سکتا۔ ایسا لگتا تھا جیسے کسی بڑے کار پوریٹ ادارے کی کوئی تقریب ہے۔ چندے مانگ کر پیسے جمع کرنے والوں کو اپنے اخراجات پر نظر اور گرفت تو رکھنا چاہئے۔ ہمارے دین میں اسراف سے باز رہنے کا حکم دیا گیا ہے اور سادگی اپنانے کا درس بھی جگہ جگہ ملتا ہے۔

سیلانی نے اپنا کام خود بڑھا لیا ہے۔ آج ان کا نعرہ ہے کہ ’’مہد سے لہد تک ‘‘ یعنی پیدائش سے موت تک وہ مخلوق کی خدمت کرتا ہے۔ خوراک، صحت، تعلیم، کھانے پینے کی اشیاء کے سٹور ، سماجی بہبود، روزگار، مختلف شعبوں میں تربیت وغیرہ۔ حال ہی میں سیلانی نے آنکھوں کے علاج کے لئے گشتی دواخانہ کی ابتدا بھی کی ہے۔ تنگ گلیوں میں آتش فرو کرنے کے انتظام کے لئے موٹر سائیکلوں کا دستہ تیار کیا ہے۔ روزگار کے سلسلے میں بے روزگار لوگوں کو آسان قسطوں پر رکشہ، خواتین کو سلائی مشینیں وغیرہ فراہم کی جاتی ہیں۔ کھانا کھلانے کے علاوہ ایسے گھرانوں کی کفالت کا بندوبست بھی کیا گیا ہے جہاں ضعیف العمر افراد ہوں اور کوئی کفیل نہ ہو، ماہانہ کفالت میں راشن کی فراہمی، گھروں کا کرایہ، بچوں کی تعلیم کے اخراجات، ضروریات کے بلوں کی ادائیگی شامل ہیں۔ غریب بچیوں کی شادی میں جہیز یا مہمانوں کے لئے طعام اور دیگر اخراجات مہیا کر کے بچیوں کو باعزت طور پر رخصت کرنے کا انتظام بھی کیا جاتا ہے۔ غرض سیلانی ضرورت مند لوگوں کی ضروری حاجات پوری کرنے کی ذمہ داری ادا کرتا ہے۔

کراچی اور حیدرآباد میں تو ہم دیکھتے ہیں کہ لوگ سیلانی کے بنائے ہوئے ٹھکانوں پر کھانا کھاتے ہیں لیکن اس کے علاوہ سرکاری ہسپتالوں میں بھی مریضوں اور ان کے تیمار داروں کو کھانے فراہم کرنے کا بندبست کیا جاتا ہے۔ سٹریچر اور پینے کے لئے پانی کا انتظام بھی ہے۔ شہروں کی سڑکوں پر سیلانی رضاکار لوگوں کو پینے کا ٹھنڈا پانی پلاتے ہیں۔ سیلانی والے دعوی کرتے ہیں کہ وہ یہ خدمات بلامعاوضہ انجام دیتے ہیں۔ دنیا بھر میں بلامعاوضہ کوئی چیز نہیں ہوا کرتی ہے۔ مفت کی سواری اور دور لے جانے کا مطالبہ تو زندگی بھر جاری رہے گا۔ سیلانی کھانا کھلاتا ہے، بہترین کام کرتا ہے لیکن اسے ایک وقت کے کھانے کا کچھ معاوضہ مقرر کرنا چاہئے خواہ وہ پانچ روپے ہی کیوں نہ ہو۔ کھانا کھانے والا کہہ سکے کہ اس نے پیسے دیکر کھانا کھایا ہے۔ اس کی اپنی عزت نفس مجروح نہیں ہو گی۔ مفت میں روٹی توڑنے کی عادت ڈالنا ، لوگوں کے ساتھ بھلائی نہیں ہے۔ لوگوں کو کچھ کرنے کی عادت ڈالنا چاہئے۔

سیلانی کے ادارے میں 1800 ملازمین کے علاوہ 2500 رضاکار ہیں جو 125 سے زائد برانچوں میں 63 شعبہ جات میں مخلوق کی خدمت پر مامور ہیں۔ 63 شعبوں کی نسبت آقائے دو جہاں صلی اللہ علیہ وسلم کی حیات مبارکہ سے ہے۔ اتنے سارے شعبوں کا انتظام چلانا مشکل کام ہوتا ہے۔ ہمارے ہاں تو حکومتیں نہیں کر پاتی ہیں۔ ایدھی اور چھیپہ مشکل کا شکار ہوجاتے ہیں۔ سیلانی کیوں کر محفوظ رہ سکے گا ؟ یہ سوچنا سیلانی والوں کا کام ہے کہ اپنے کام کے شعبوں کو محدود کریں اور ان محدود شعبوں میں ہی مہارت دکھائیں۔ انہیں تعلیم، تربیت، ہنر مندی کے کاموں پر توجہ دینا چاہئے۔ پاکستان میں جہاں تمام سرکاری ادارے وسائل رکھنے کے باوجود عوام الناس کی خدمت کرنے میں ناکام ہیں اور حکومت ہسپتال، تعلیمی ادارے، حد تو یہ ہے کہ پارک اور کھیل کے میدان بھی ’’گود ‘‘ دینے میں سبکی یا شرمندگی محسوس نہیں کرتی ہیں وہاں غیر سرکاری تنظیموں کو حکومتوں کا ہاتھ اس طرح نہیں بٹانا چاہئے جیسا سیلانی، ایدھی، چھیپہ، فلاح انسانیت یا دیگر تنظیمیں کرتی ہیں۔ حکومتوں کو مجبور کیا جائے کہ وہ آئین پاکستان میں دی گئی اپنی ذمہ داریاں احسن طریقوں سے انجام دیں، شاہانہ طرز حکمرانی سے نجات حاصل کی جائے۔ نااہل، غیر ذمہ دار اور غیر مخلص لیکن حکومتوں میں شامل لوگوں کے پسندیدہ اور خوشامدی لوگوں کو سرکاری اداروں میں بھرتی سے باز رہا جائے تو کچھ بات بنے گی۔

وگر نہ حکومت کے لوگوں سے ذمہ داری نہیں نبھائی جاتی ہے تو حکومت سے دست بردار ہوجائیں۔ عوام کے ٹیکسوں یا بین الاقوامی اداروں اور غیر ملکی

قرضوں پر حکومت کے لوگوں کو شاہانہ زندگی گزارنے کی اجازت کیوں دی جائے۔ اس پر بھی نخرے ہیں کہ ان کی تنخواہیں بڑھائی جاتی ہیں، بیرون ملک علاج کرانے کا خرچہ دیا جاتا ہے۔ اراکین پارلیمنٹ اور اسمبلی کی جب تنخواہیں ، مراعات اور سہولتیں بڑھائی جاتی ہیں تو دل جلتا ہے۔ کیا اس تماش گاہ میں وزیر اعظم، وزرائے اعلیٰ، وزراء، بڑے سرکاری عمل داروں اور اہل کاروں کو اندازہ ہے کہ لوڈ شیڈنگ کیا ہوتی ہے، گرمی کا درجہ حرارت کیا ہوتا ہے، مضر صحت پانی پینے کا کیا خمیازہ بھگتنا پڑتا ہے۔ ٹوٹی ہوئی سڑک پر گاڑی کس طرح چلتی ہے؟

کیا اعلیٰ سرکاری عہدیداروں کی ذمہ داری صرف یہ رہ گئی ہے کہ ذرائع ابلاغ سے کسی بھی واقعہ کے رونما ہونے کے بعد یہ خبر شائع کرادی جائے کہ وزیر اعظم، وزیر اعلیٰ نے نوٹس لے لیا ہے۔ کیا ان کی ذمہ داری واقعات کا صرف نوٹس لینا ہی رہ گیا ہے ؟ ہسپتالوں میں کولڈ سٹوریج مردہ خانے بنانے کی ذمہ داری حکومت پر ہے، کسی غیرسرکاری تنظیم کو یہ کام نہیں کرنا چاہئے۔ جب غیر سرکاری تنظیمیں کوئی کام کرنے کی ابتدا کرتی ہیں تو حکومت دو قدم پیچھے ہٹ جاتی ہے اور سمجھتی ہے کہ اس کا کام تو ہو رہا ہے اور غیر سرکاری تنظیموں کے لوگ بھی اپنے آپ کو حکمران کی نقل سمجھنے لگتے ہیں۔ غیر ملکی چندوں پر پلنے والی تنظیموں کے کرتا دھرتا لوگوں کو تو ایسا ہی پایا جاتا ہے۔

علی حسن

ماسٹر بشیر کے گاؤں میں سب ہیں ڈگری ہولڈر

قمر الاسلام راجہ ایم پی اے، ایک سروے مشن پر جنوبی پنجاب کے مختلف اضلاع کے دورے پر تھے۔ مختلف تعلیمی اداروں میں ٹیچرز نے بتایا کہ ان کا تعلق حافظ آباد سے ہے۔ قمر الاسلام راجہ کے لیے یہ بات بڑی حیران کن تھی کہ کہاں حافظ آباد اور کہاں ڈیرہ غازی خان۔ اتنی دور سے یہ بچیاں یہاں کیسے آگئیں۔ لیکن انہوں نے سوچا کہ شاید کوئی وجہ ہوگی روزگار کا مسئلہ ہوگا یا کوئی عزیز رشتہ دار یہاں رہتے ہوں گے۔ اسی سوچ میں غرق راجہ صاحب ہائی وی پر واقع ایک ہوٹل میں رکے۔ انہیں ڈرائیور ہوٹل پر بیٹھنے میں بھی کوئی عار یا ججھک محسوس نہ ہوئی۔ ان کا ڈرائیور ان کی تشویش کو بھانپ چکا تھا۔ قریب آیا اور بولا راجہ صاحب، میں آپ کو حافظ آباد کے بارے میں کچھ بتاتا ہوں۔ یہ بچے اور بچیاں اس حافظ آباد کا ذکر نہیں کر رہے جو آپ سمجھ رہے ہیں۔ یہ حافظ آباد دراصل ضلع ڈیرہ غازی خان کا ایک چھوٹا سا گائوں ہے۔

راجہ صاحب یہ سن کر حیران ہوئے ۔ کھانا کھایا ، چائے پی اور ڈرائیور کو حافظ آباد چلنے کا مشورہ دیا۔ جس جگہ وہ ٹھہرے ہوئے تھے حافظ آباد کا گائوں وہاں سے زیادہ مسافت پر نہیں تھا۔ چند گھنٹوں کی ڈرائیوکے بعد وہ ایک گائوں میں پہنچے ۔ اس گائوں میں ہر بچے کو استاد بشیر کا علم تھا۔ وہ کہاں رہتے ہیں، کتنے بچے ہیں، کیا کرتے ہیں ، پورا گائوں اس ٹیچر کی شخصیت سے واقف تھا۔ یہ تبدیلی کیسے آئی کہ ایک پسماندہ گائوں کے لڑکے اور لڑکیاں ایم اے ہی نہیں ڈاکٹر اور انجینئرنگ کی ڈگری بھی حاصل کرنے میں کامیاب ہو گئے۔ یہ شاید واحد گائوں تھا جس میں ایک شخص بھی ناخواندہ نہیں تھا۔ شائد سارے ہی ڈگری ہولڈر تھے۔ ڈاکٹر اور انجینئر بھی اسی گائوں میں پیدا ہوئے۔

پوچھتے پچھاتے راجہ صاحب ماسٹر بشیر کے گھر پہنچے ۔ وہ ایک چھوٹے سے مکان میں چارپائی پر لیٹے ہوئے تھے۔ راجہ صاحب ان کے پاس بیٹھے اور ان سے بات کی۔ یہ تبدیلی کوئی این جی او نہیں لائی ،بلکہ ایک ماسٹر بشیر کی محنت کا نتیجہ تھی۔ وہی ماسٹر بشیر آج ریٹائرمنٹ کے کئی سال بعد بستر پر آرام فرما رہے تھے۔’’یہ سب کچھ آپ نے کیسے کر دکھایا‘‘ راجہ صاحب کے سوال پر وہ کہنے لگے ؟ ’’میں نے زندگی میں ایک مشن بنایا کسی کو ناخواندہ نہیں رہنے دوں گا۔ سب کو تعلیم دوں گا۔ جو ہو سکے گا کروں گا۔ سکول سے فارغ ہو کر اپنے گھر پر بچے اور بچیوں کو پرائیویٹ ٹیویشن دی مگر اس کارخیر کا کبھی کوئی صلہ نہ لیا۔

مختلف گروپوں کی صورت میں ہر بچی اور بچے کو پڑھایا اور انہیں اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے کا مشورہ دیا۔ ‘‘ راجہ صاحب اس مشن پر حیران رہ گئے۔ انہوں نے ماسٹر بشیر کو ایک سکول دینے کی پیشکش کی انہوں نے انکار کیا۔ راجہ صاحب نے ان کے بیٹوں کو سکول دینے کی پیشکش کی۔ یہ پیشکش بھی انہوں نے قبول نہ کی۔ ان کے بیٹے پہلے ہی پروفیشنل ڈگری ہولڈر ہیں۔ ان سب باتوں کے بعد ماسٹر صاحب کہنے لگے ’’میری ریٹائرمنٹ کو کئی سال بیت گئے ۔ اب ہمت نہیں رہی کچھ کرنے کی لیکن جیسا بویا ہے ویسا ہی پھل کھایا ہے۔ اگر تمام استاد اسی طرح خدمت خلق کا جذبہ لے کر تعلیم کے مشن کو پورا کریں تو کوئی بعید نہیں کہ چند سالوں میں تمام بچے ، اور بڑے بھی زیور تعلیم سے آراستہ نہ ہو جائیں۔ ‘‘

راجہ صاحب یہ سن کر مطمئن ہو گئے۔ انہوں نے محسوس کیا کہ پاکستان میں ابھی ایسے لوگ زندہ ہیں جو اپنے فرائض بھرپور مشن کے ساتھ سرانجام دے رہے ہیں۔ ماسٹر بشیر کی یہ کہانی کئی انتظامی کورسز میں سنائی جا چکی ہے۔ بہت سے افسران ایک فرد کی ہمت سے آنے والی تبدیلی سے واقف ہیں۔ دیکھنا صرف یہ ہے کہ ہمارے سیکرٹریٹ میں بیٹھے افسران ، محکمہ صحت کے ڈاکٹر، محکمہ تعلیم کے اساتذہ ، محکمہ پولیس کے افسران اور اہلکاران کب اس جذبے کے ساتھ کام کرتے ہیں۔

ڈاکٹر سید فیصل عثمان